سپریم کورٹ کا حکم برقرار! سیاسی بنیادوں پر بھرتی ہونے والے 16 سو افسران کو نوکری سے برخاست کر دیا گیا

سپریم کورٹ کے حکم پر سابقہ ادوار میں وفاقی اداروں میں سیاسی بنیادوں پر بھرتی ہونیوالے 1600 افسران کو نوکری سے برخاست کردیاگیا جبکہ حکومت پنجاب نے سیاسی بنیاد پر بھرتی ہونے والے ایم ڈی واسا جبار انور کے خلاف کوئی ایکشن نہیں لیاگیا۔ بتایاگیا ہے کہ سپریم کورٹ نے سابقہ ادوار میں سیاسی بنیادوں پر بھرتی ہونیوالے افسران وملازمین کو برخاست کرنے کا فیصلہ سنا دیا، جس پر

وفاقی حکومت کی طرف سے بھرپورایکشن لیتے ہوئے وفاقی اداروں میں مختلف عہدوں پر براجمان 1600سرکاری ملازمین کو نوکری سے برخاست کردیاگیا جن میں کئی ملازمین مدت ملازمت پوری کرتے ہوئےریٹائرمنٹ کے قریب بھی تھے اور سوئی ناردن گیس فیصل آباد سے 187افسران کونوکری سے فارغ کیا جاچکا ہے۔ لیکن سپریم کورٹ کے فیصلہ کی روشنی میں سیاسی بنیادوں پر 1990ء

میں ایم پی اے اسدالرحمن کی سفارش پر اْس وقت کے وزیراعلی پنجاب میاں محمد نوازشریف کے حکم پر موجودہ ایم ڈی واسا جبار انور کو محکمہ واسا فیصل آباد میں اسسٹنٹ ڈائریکٹر بھرتی کیاگیا۔ بھرتی کرتے وقت نہ تواخبار میں اشتہار دیاگیا اور نہ ہی انٹرویو لیاگیا اور بعدازاں ان کو سیاسی اثرورسوخ کی وجہ سے میرٹ کی دھجیاں اڑاتے ہوئے اسسٹنٹ ڈائریکٹر سے ڈپٹی ڈائریکٹر اور پھر

ڈائریکٹر کے عہدے پر ترقی بھی دی گئی۔ شہری حلقوں نے ڈی جی ایف ڈی اے سے مطالبہ کیا ہے کہ سپریم کورٹ کے فیصلہ کی روشنی میں موجودہ نااہل’ ناتجربہ کار ایم ڈی واسا جبار انور کے خلاف ایکشن لیا جائے۔یہ امرقابل ذکر ہے کہ سپریم کورٹ کے فیصلہ کی روشنی میں سابق ڈائریکٹر

ایڈمن واسا غلام مرتضیٰ بٹر کو بارہ سال قبل سیاسی بنیادوں پر بھرتی کی وجہ سے نوکری سے ہاتھ دھونا پڑے تھے۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *