اہلیت کو مزید بڑھانے کا فیصلہ

متحدہ عرب امارات کا گولڈن ویزا; طویل مدتی رہائش کی اہلیت کو مزید بڑھانے کا فیصلہ

دبئی ( 06 ستمبر 2021ء) : متحدہ عرب امارات نے گولڈن ویزا میں طویل مدتی رہائش کی اہلیت کو بڑھانے کا فیصلہ کر لیا۔ نئی ریگولیشن اس لیے کی گئی تاکہ مینیجرز ، سی ای او ، سائنس ، انجینئرنگ ، صحت ، تعلیم ، کاروباری انتظام اور ٹیکنالوجی کے ماہرین کو بھی شامل کیا جا سکے۔ تفصیلات کے مطابق اتوار کے روز اماراتی حکومت نے ویزا اصلاحات کا اعلان کیا ، یہ اعلان اُس وقت کیا گیا جب حکومتی کی جانب سے رواں ماہ لانچ ہونے والے 50 پراجیکٹس میں سے 13 پراجیکٹس متعارف کروائے گئے۔

”پراجیکٹس آف دی 50” کے تحت انٹری اور رہائشی سسٹم کو اپ گریڈ کیا گیا تاکہ کاروبار، نوکری، سرمایہ کاری، تعلیم اور زندگی گزارنے کے حوالے سے متحدہ عرب امارات کو ایک آئیڈیل جگہ کے طور پر پیش کیا جا سکے۔حکومت کے جانب سے کی جانے والی ریگولیشنز میں سے ایک ریگولیشن کے تحت گولڈن ویزا کی اہلیت کو مزید بڑھایا گیا تاکہ مینیجرز ، سی ای او ، سائنس ، انجینئرنگ ، صحت ، تعلیم ، کاروباری انتظام اور ٹیکنالوجی کے ماہرین کو بھی شامل کیا جا سکے۔

مزید برآں حکومت کی جانب سے طویل مدتی رہائش حاصل کرنے کے طریقہ کار کو انتہائی ہنر مند اور خصوصی رہائشیوں ، سرمایہ کاروں ، کاروباریوں ، سائنسدانوں ، علمبرداروں ، سرکردہ طلباء اور گریجویٹس کے لیے ہموار کیا گیا ہے۔ یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ گولڈن ویزا کے تحت تارکین وطن بغیر کسی نیشنل سپانسر کے متحدہ عرب امارات میں کام اور تعلیم حاصل کر سکتے ہیں جبکہ گولڈن ویزا کے تحت رہائش بھی اختیار کر سکتے ہیں۔یاد رہے کہ گذشتہ ماہ متحدہ عرب امارات کا گولڈن ویزا دنیا بھر کے پروفیشنلز کی نگاہوں اور اْمیدوں کا مرکز بنا۔اس ویزے کی بدولت امارات میں پانچ سال یا دس سال تک قیام ممکن ہو جاتا ہے۔اماراتی حکومت نے اب ایک اور شعبے سے منسلک افراد کے لیے گولڈن ویزا دینے کا اعلان کیا۔ اماراتی میڈیا کے مطابق آئندہ سے دُنیا بھر میں مقیم انسانیت کی خدمات اور فلاحی سرگرمیاں انجام دینے والے افراد کو بھی امارات کا گولڈن ویزا جاری کیا جائے گا۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *