دو پیسے کی برکت

مغل بادشاہ اور نگ زیب عالمگیر کے پاس ایک ضرورت مند آیا۔کہنے لگا :”اے شہنشاہ عالم گیر ! میں نہایت غریب انسان ہوں۔مجھے اپنی دوجواں سال بیٹیوں کی شادی کرنی ہے۔آپ میری مدد فرمائیں۔“نونہالو ! شہنشاہ ہند نے جواب دیا :”اچھا تم کل آنا۔ہم سے جو ہو سکے گا تمہاری مدد کریں گے۔“

ضرورت مند چلا گیا۔اسی شب شہنشاہ اور نگ زیب نے لباس بدلا ،بھیس بدلا اور نکل کھڑے ہوئے۔راستے میں دیکھا کہ ایک مسافر سامان لیے کھڑا ہے اور کسی محنت کش کے انتظار میں ہے۔شہنشاہ ہند ایک محنت کش کے بھیس میں تھے۔انھوں نے آگے بڑھ کر مسافر کا سامان اپنے سر اور پیٹھ پر لاد لیا اور جہاں مسافر نے کہا ،وہاں پہنچا دیا۔ مزدوری دو پیسے ملی۔اور نگ زیب عالم گیر محل آئے۔نہایت اطمینان سے سو گئے۔صبح ہوئی حاجت مند پہنچ گیا۔

شہنشاہ ہند نے فرمایا :”یہ میری محنت کی کمائی ہے۔قطعی حلال ہے۔دو پیسے ہیں یہ۔یہ لے جاؤ۔اللہ تمہارامدد گار ہو۔“نو نہا لو ! وہ حاجت مند تو بڑا حیران پریشان ہوا۔دو پیسے ! ان دوپیسوں سے دو بیٹیوں کی شادیاں کیسے کروں گا۔مایوس ہو کر چلا گیا۔ نونہالو ! اب سنو پھر کیا ہوا۔وہ حاجت مند اپنے علاقے میں جا رہا تھا۔راستے میں دیکھا کہ اناربِک رہے ہیں۔اس نے دوپیسے کے انار لے لیے۔اس کے اپنے علاقے میں انار نہیں ہوتے تھے۔اب وہ سفر کرتے کرتے اپنے علاقے میں پہنچ گیا۔

دور ایک علاقے میں ایک رئیس رہتا تھا۔اس کی بیٹی بیمار تھی۔سارے علاج نا کام ہوئے۔آخر ایک حکیم صاحب نے فرمایا : ”اس مریضہ کو اب انار کے رس کی ضرورت ہے۔اس سے آرام آئے گا۔“ نونہالو ! انار تو وہاں تھا نہیں۔رئیس نے منادی کرائی جو انار جلد فراہم کرے گا، اسے انعام واکرام دیا جائے گا۔ یہ بات اس حاجت مند تک پہنچی ،جس نے شہنشاہ اور نگ ز یب کی حلال کمائی دو پیسے کے انار خریدے تھے۔ وہ انار فوراً ہاتھ میں حفاظت سے لے کر رئیس کے گھر پہنچ گیا۔

انار پیش کردیے۔جناب حکیم صاحب نے رس نکالا اور رئیس زادی کو پلا دیا۔ اللہ کی شان انار کا رس تریاق ثابت ہوا۔وہ اچھی ہو گئی۔رئیس نے انار لانے والے سے کہا : ”بولو کیا مانگتے ہو ؟حاجت مند نے اپنی دو بیٹیوں کی شادی کا ذکر کیا۔رئیس نے دونوں کی شادی کرادی اور انار والے کو بہت سی رقم دے دی۔وہ تو مالا مال ہو گیا ۔ نو نہالو ! تم نے غور کیا! دو پیسوں میں کیسی برکت ہوئی ! نونہالو ! یا د رکھنا ،یہ برکت حلال کی کمائی کے دوپیسوں کی ہے۔ شہنشاہ نے مسافر کا سامان ڈھو کر دو پیسے کمائے تھے۔محنت کی تھی۔حلال کمائی تھی۔اسی لیے ایسی برکت ہوئی۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *